سوال: فراق گورکھپوری کی غزل گوئی مختصراً بیان کیجیے۔

1 Answer

  1. فراق گورکھپوری کا شمار اردو کے ممتاز ترین جدید شاعروں میں کیا جاتا ہے۔ ان کا اصل نام رگھوپتی سہائے تھا۔ ان کی پیدائش گورکھپور میں1896 ہوئی۔ اس زمانے میں عام ماحول کی طرح ان کے گھر میں شعر و شاعری کا چرچا تھا۔ بچپن سے ہی شعرگوئی کا شوق تھا۔ کہا جاتا ہے کہ وہ تیرہ برس کی عمر سے شعر کہنے لگے تھے۔ انہوں نے تعلیم الہ آباد میں حاصل کی اردو اورفارسی کے علاوہ انگریزی میں بھی اعلی تعلیم حاصل کی۔ اس کے بعد انٹرنیشنل کانفرنس میں شامل ہوئے ۔فراق گورکھپوری کچھ دیر جیل کی زندگی بھی گزری۔

    فراق گورکھپوری کا اردو ادب میں بے شمار کلام ہے ان کے کہیں مجموعے شائع ہو چکے ہیں جن میں روح کائنات، شبنمستان، رمزوکنایات،گل نغمہ خاص طور پر قابل ذکر ہیں۔ ان کی رباعیوں کا مجموعہ روپ بھی بہت مشہور ہے۔ اردو میں تاثراتی تنقید کے علمبردار میں بھی فرق کا نام لیا جاتا ہے۔ فراق گورکھپوری کو1960 میں ساہتیہ اکیڈمی ایوارڈ دیا گیا۔1968 میں انہیں پدم بوشن کا خطاب ملا۔ اس کے علاوہ ان کو گیان پیٹھ ایوارڈ بھی دیا گیا ہے۔ انتقال سے چند ماہ پہلے 1982 میں ان کو غالب اکیڈمی ایوارڈ پیش کیا گیا ہے۔

    • 0