سوال: شہریار کی زندگی پر نوٹ لکھیے۔

سوال: شہریار کی زندگی پر نوٹ لکھیے۔

1 Answer

  1. جواب: کنوار اخلاق محمد جو اردو دنیا میں شہریار کے نام سے مشہور ہیں، 16 جون1936 میں آنولہ ضلع بریلی میں پیدا ہوئے۔ ہردوئی میں چھٹی جماعت تک پڑھنے کے بعد علی گڑھ چلے گئے جہاں انہوں نے باقاعدہ تعلیم مکمل کی۔ کالج کے زمانے میں ہی شعر گوئی کی طرف رجحان ہوا اور1965ء میں” اسم اعظم “کے نام سے شعری مجموعہ شائع کیا۔ اسے بہت پسند کیا گیا اور شہریار شعری دنیا میں مشہور ہوئے۔ اس کے بعد ”ساتواں درد ، نیند کی کرچیاں ، خواب کا دربند ہے، حاصل سیر جہاں ،
    شام ہونے والی ہے“ شعری مجموعے چھپے اس پر انہیں ساہتیہ اکیڈمی ایوارڈ بھی ملا۔ 2008 میں ان کو گیان پیٹھ ایوارڈ ملا جو ملک کا سب سے بڑا ادبی انعام ہوتا ہے۔

    پروفیسر شہریار علی گڑھ یونیورسٹی میں صدر شعبہ اردو کی حیثیت سے ریٹائر ہو گئے۔ شہریار جدید اردو ادب کے نمائندہ اور ممتاز اہل قلم میں شمار کیے جاتے ہیں۔ جن کو انیس سو بیس کے بعد کی اردو شاعری کے حوالے سے اپنی شناخت بنوانے کا موقع ملا اور یہ اردو کے مشہور شاعروں میں شمار ہوتے ہیں۔ جن کو مختلف ادبی مراکز، اداروں اور تنظیموں کی پذیرائی وقت پر حاصل ہوتی رہی ہے۔

    شہریار کی بیشتر غزلوں میں مصوری و محرکات کی تشکیل نظر آتی ہے۔ وہ غزل کی فنی نزاکتوں سے بخوبی واقف تھے۔ وہ اپنے احساسات کو نہایت ہی عمدہ طریقے سے بیان کرتے تھے۔ ان کی غزلیں قاری کو لطف اور سرور بخشتی ہیں۔

    • 0