سوال: شاعر نے پودوں پر گرمی کی شدت کی منظر کشی کیسے کی ہے؟

سوال: شاعر نے پودوں پر گرمی کی شدت کی منظر کشی کیسے کی ہے؟

1 Answer

  1. جواب : شاعر پودوں پر گرمی کی شدت کی منظر کشی کرتے ہوئے کہتے ہیں کہ دور دور تک کسی درخت پر کوئی گُل، کوئی پھل موجود نہیں تھا۔ نہ ہی وہاں کوئی سبزہ تھا اور نہ کوئی ہریالی بلکہ پھولوں کی ہر شاخ گرمی کی شدت سے سوکھ کر کانٹا بن چکی تھی۔

    • 0