سوال: درج ذیل اشعار کی تشریح کیجیے : ”دعا میں ذکر کیوں ہو مدعا کا کہ یہ شیوہ نہیں اہل رضا کا“

1 Answer

  1. اس شعر میں شاعر کہتے ہیں کہ ہم اللہ تعالیٰ سے دعا کرتے ہیں لیکن ہماری اس دعا میں کوئی خواہش کوئی فرمائش نہیں ہونی چاہیے بلکہ ہمیں اللہ تعالیٰ نے جو عطا کیا ہے ہمیں اس کا شکر گزار ہونا چاہیے۔ شاعر کہتے ہیں کہ اللہ تعالیٰ کو راضی کرنے والوں کو یہ زیب نہیں دیتا کہ وہ اللہ تعالیٰ سے بہت ساری چیزیں طلب کریں بلکہ اہلِ رضا تو اللہ تعالیٰ کے شکر گزار رہتے ہیں اور اس کا ہمیشہ شکر ادا کرتے رہتے ہیں۔

    گنہ گارو ! چلو ، عفو الٰہی
    بہت مشتاق ہے عرض خطا کا

    اس شعر میں شاعر گنہ گاروں سے مخاطب ہو کر کہتے ہیں کہ لوگوں چلو ہم سب اللہ تعالیٰ کی بارگاہ میں حاضر ہو کر اپنے گناہوں کی معافی مانگتے ہیں۔ بیشک اس رب کی رحمت بہت وسیع ہے اور وہ عطا کرنے والا اور خطا معاف کرنے والا ہے، تو ہم سب اس کے پاس چل کر اس سے اپنے گناہوں کی معافی طلب کرتے ہیں۔

    • 0